KhabarBaAsar

پاکستان میں سائبر حملوں میں 17 فیصد اضافہ!

Facebook
Twitter
LinkedIn
Pinterest
Pocket
WhatsApp

اسلام آباد(شہزاد پراچہ)گلوبل سکیورٹی کمپنی کیسپرسکی کی تازہ ترین رپورٹ کے مطابق ایک سال کے دوران پاکستان میں 2023 میں سائبر حملوں میں 17فیصد اضافہ ہوا۔

کیسپرسکی کی جانب سے منعقدہ نویں سائبر سکیورٹی کانفرنس میں ماہرین کی جانب سے انفارمیشن ٹیکنالوجی کے حوالے مختلف پہلووں پر بات کی گئی۔ بات چیت کا مرکزی نقطہ مصنوعی ذہانت جیسے ابھرتے ہوئے ٹیکنالوجی کے رجحانات کی حفاظت تھا۔

کیسپرسکی کے سائبر امیونٹی اپروچ نے ایسے حل پیدا کرنے کے طریقے کے طور پر مرکز کا مرحلہ لیا ر جو ممکنہ خطرات کی تعداد کو کم سے کم کرتا ہے۔

پاکستان میں خطرے کے منظر نامے کو دیکھتے ہوئے کیسپرسکی کی ٹیلی میٹری نے 2022 کے مقابلے میں 2023 میں ملک میں مجموعی طور پر سائبر خطرات کی تعداد میں 17 فیصد اضافہ دکھایا۔کیسپرسکی کی جانب سے 2023 میں پاکستان میں 16 ملین سائبر حملوں کو روکا گیا۔

عالمی سائبر سیکیورٹی اور ڈیجیٹل پرائیویسی کمپنی کاسپرسکی کی تازہ ترین تحقیق کے مطابق پاکستان میں 24.4فیصد صارفین آن لائن خطرات سے متاثر ہیں۔

پاکستان میں خطرے کے منظر نامے کا مزید جائزہ لیتے ہوئے، کیسپرسکی ماہرین نے بتایا کہ بینکنگ میلویئر کے استعمال سے ہونے والے حملوں میں 59 فیصد اضافہ ہوا، ایسے حملے آن لائن بینکنگ کا ڈیٹا اور متاثرہ مشینوں سے دیگر حساس معلومات اکٹھا کرنے کے لیے بنائے گئے تھے۔

محققین نے ٹروجن حملوں میں 35 فیصد اضافے کی بھی اطلاع دی ہے جو خود کو جائز کمپیوٹر پروگرام کے طور پر چھپاتے ہیں لیکن سائبر کریمنلز کے ذریعہ بدنیتی پر مبنی کوڈ چلانے کے لیے استعمال ہوتے ہیں۔

اس کے علاوہ، شکار کے ڈیٹا، فائلوں یا سسٹم کو انکرپٹ کرنے کے لیے تیار کیے گئے رینسم ویئر کے حملوں میں پاکستان میں 24 فیصد اضافہ ہوا، جس سے انہیں ادائیگی کے عوض قابل رسائی بنایا جا سکے۔

اس کے علاوہ، محققین نے رپورٹ کیا کہ اسپائی ویئر کے استعمال سے حملوں میں 36 فیصد اضافہ ہوا، ایسے حملے نقصان دہ سافٹ ویئر ہیں جو صارف کے کمپیوٹر میں داخل ہوتے ہیں، ڈیوائس اور صارف سے ڈیٹا اکٹھا کرتے ہیں، اور تیسرے فریق کو ان کی رضامندی کے بغیر بھیج دیتے ہیں۔

اس حوالے سے ہم نیو کے ساتھ خصوصی بات چیت کرتے ہویے سائبر سکیورٹی ایکسپرٹ و پاشا کے سابق چئیرمین شہزاد شاہد کا کہنا تھا کہ پاکستان میں ڈیٹا پروٹیکشن کے حوالے سے طویل المدتی پالیسی سازی پر مزید کام کرنے کی ضرورت ہے اور تمام اسٹیک ہولڈرز کو اس حوالے سے ملکر کام کرنا ہوگا۔

میٹا ریجن کے لیے کیسپرسکی کے گلوبل ریسرچ کے سربراہ، امین حسبینی کا کہنا تھا کہ ٹیکنلوجی کی فیلڈ میں تیزی سے آگے بڑھتے ہوئے ملک ہونے کے ناطے اور ڈیجیٹل تبدیلی کو قبول کرنے کے لیے پاکستان کا ایشیا میں بہت اہم کردار ہے۔

جیسے جیسے سائبر سیکیورٹی کا منظر نامہ تیار ہوتا ہے، سائبر خطرات متنوع ہوتے چلے جاتے ہیں۔ یہ رجحان خاص طور پر مصنوعی ذہانت جیسی جدید ٹیکنالوجیز کے ابھرنے اور خطے کے اندر بڑھتے ہوئے جغرافیائی سیاسی اور اقتصادی انتشار کی وجہ سے واضح ہے۔ یہ عوامل اجتماعی طور پر سائبر کرائم میں اضافے اور سائبر حملوں کی بڑھتی ہوئی پیچیدگی میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔”

کاسپرسکی کے تجزیہ کے مطابق مشرق وسطی، ترکی اور افریقہ اور ایشیا ریجن میں سائبرسیکیوریٹی کے خطرے کے منظر نامے میں نمایاں اتار چڑھاؤ آیا ہے۔

خطے میں، ترکی میں سب سے زیادہ صارفین آن لائن خطرات سے (41.8فیصد)متاثر ہوا، اس کے بعد کینیا (39.2)، قطر (38.8) اور جنوبی افریقہ (35)، عمان (23.4) اور مصر (27.4) میں اس کے بعد سعودی عرب (29.9) اور کویت میں (30.8فیصد) سے کم صارفین متاثر ہوئے۔

50% LikesVS
50% Dislikes
Facebook
Twitter
LinkedIn
Pinterest
Pocket
WhatsApp

Never miss any important news. Subscribe to our newsletter.

Related News

Never miss any important news. Subscribe to our newsletter.

Recent News

Editor's Pick